جمعہ، 21 جون، 2013

ممتاز قادری ایک امن ساز ہے

                      اگر صرف اعتراض یہ  ہے کہ ممتاز قادری ایک قاتل ہے! تو ممتاز قادری ایک قاتل ہے! ایک غازی کے لیے یہ ہونا ضروری ہے۔ مجھے کہنے دیں کہ ممتاز قادری کس طرح ایک امن ساز ہے ۔ آج کے نام نہاد  امن کے ٹھیکے دار اپنے وقت کے سب سے بڑے خونی ہیں۔ امریکی اور نیٹو افواج نے امن کے نام پر لاکھوں لوگوں کا خون بہایا ہے۔ وہ اب بھی مشرق وسطی، عراق اور افغانستان میں بے گناہ بچوں اور عورت کو مار رہے ہیں۔ وہ بھی خونی ہیں لہٰذا انہیں ممتاز قادری کے کیس کے بارے میں بات کرنے سے بہتر ہے کہ اپنا  منہ بند رکھیں۔ اصل میں! ممتاز قادری والا معاملہ ہر مسلمان کے ساتھ ہے۔ حضور نبی محمد صلی اللہ علیہ وسلم سے محبت مسلمانوں کے ایمان کا حصہ ہے۔ کس طرح اور کیونکر کسی کو اتنی جرات ہو کہ وہ  سلمان تاثیر کی طرح توہین رسالت کر کے دنیا کے امن کو تباہ کرنے کی کوشش کرے؟ سلمان تاثیر یہودیوں کی لابی اور قادیانی لابی کی طرف سے ایک ہپناٹائزد شخص تھا۔
                              سلمان تاثیر نے نہ صرف آسیہ بی بی کی سزا کے بارے میں عدالت کے فیصلے کو تسلیم کرنے سے انکار کیا، بلکہ اس نے  قانون توہین رسالت 295-C کے لئے "سیاہ قانون "جیسے گستاخانہ الفاظ استعمال کیے اور وہ اس میں بھی ترمیم یا اس قانون کو ختم کرنے کے لئےچیختا تھا۔ یہ قانون (295 سی) قرآن و حدیث (حضور نبی محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے اقوال) کی روشنی میں بنایا گیا تھا۔ ایک Blasphemer گستاخ (آسیہ بی بی) کی حمایت بذات خود ایک گستاخی تھی اور عدالت کی توہین تھی، جبکہ سلمان تاثیر نے اسے ایک "معصوم" کہنے کے بعد اس قانون کے درپے ہو گیا۔ سلمان تاثیر ایک ایسا ماحول پیدا کرنے کے لئے جا رہا تھا جس میں امن و امان کی صورت حال خراب ہو رہی تھی اور پھر اس کو کنٹرول نہیں کیا جا سکتاتھا۔  لہذا، ایک پرامن ماحول کے لئے اسے جہنم رسید کرنا وقت کی ضرورت تھی۔ اس طرح، غازی ملک ممتاز حسین قادری کو ایک پرامن ماحول کو برقرار رکھنے کے لئے ایک قدم اٹھانا پڑا۔ ممتاز قادری زندہ رہو تابندہ رہو! اللہ تعالی آپ کی حفاظت فرمائے۔
عبدالرزاق قادری