Saturday, August 17, 2019

فی سبیل اللہ فساد۔۔۔ تحریر: عبدالرزاق قادری

میں ایک طویل عرصہ سے کچھ کہنا چھوڑ ہی چکا تھا، آج ایک حضرت صاحب کی ٹائم لائن سے دوسرے اور پھر آگے سے آگے دیکھتا گیا، وہ سارے مولوی صاحبان، علامہ خادم رضوی کی سربراہی میں جہادِ کشمیر لڑرہے تھے اور پاکستانی حکومت و افواج کے خلاف محاذ کھولے بیٹھے تھے، مجھے اعتراف ہے کہ میں بھی حکومت کا ناقد اور کسی حد تک ہمارے نااہل اداروں پر بھی تنقید کرتا ہوں، لیکن میں پاک فوج یا ملکِ پاکستان کا مخالف یا دُشمن ہرگز کبھی نہیں رہا، لیکن ان فی سبیل اللہ فساد والے مولویوں کے طرزِ تخاطب سے یوں محسوس ہو رہا ہے کہ نعوذباللہ شاید نبی کریم ﷺ نے بھی ”دوسروں“ پر قتال محض اپنے اقتدار وغیرہ کے لیے تھا۔ نعوذ باللہ من ذٰلک۔ اِن مولویوں میں سے کتنے لوگ دیانت دار ہیں یہ کون جانتا ہے، ہم تو کسی حد تک اِن کی قبیل سے ہیں، جو کام اِن کے ذمہ ہیں وہ جانے کون کرے گا، جبکہ جو فرائض کسی دوسرے کے ہیں اُن کے متعلق شور مچاتے رہتے ہیں، آج تک مساجد میں دس ہزار روپے تنخواہ تو کروا نہیں پائے (بعض جدید مساجد میں بیس سے پچیس ہزار مل جاتی ہے، لیکن اکثریت کا حصہ بڑے بڑے جثے والے قائدین کھا جاتے ہیں)۔ ایک بات کی وضاحت کر دوں کہ یہ سارے مولوی اہلِ سنت ہیں، کوئی وہابی یا دیوبندی ٹائپ نہیں، جنہیں کل تک ہم دہشتگرد کہتے تھے کہ وہ ہماری مساجد پر حملے کرنے والوں کا دفاع کرتے تھے، آج یہ اہلِ سنت (بریلوی) بھی خود کو دہشت گرد دہشتگرد قرار دے ہیں۔ انہیں اس بات کا خدشہ کیوں ہے کہ حکومت انہیں دہشتگرد قرار دے گی؟
اگر کوئی ریاست کے خلاف کسی غیر قانونی کارروائی میں متشددانہ ذہنیت کے ساتھ مسلسل ملوث ہوگا تو اُسے ریاست دہشتگرد قرار دے گی، خواہ وہ بریلوی ہو یا پھر شیعہ۔ وہ کسی دوسرے مذہب سے تعلق رکھتا ہوگا تو اُسے بھی اسی زمرے میں رکھا جائے گا۔
اب رہ گئی بات کہ کشمیر میں ظُلم ہو رہا ہے، تو کیا یہ ظلم عمران خان یا پاک فوج کروا رہی ہے؟ اس کا جواب نفی میں ہے۔
دوسری بات کہ، ہر ذی شعور مسلمان کیا، دُنیا بھر کے سلیم الفطرت انسانوں میں اس ظلم کی کی وجہ سے بے چینی پائی جاتی ہے، جس کا اظہار دُنیا بھر میں کیا جا رہا ہے۔
یہ جاہل مولویوں کا ٹولہ، جہاد، جہاد کہہ رہا ہے۔ کیا کبھی جہاد بند بھی ہوا ہے۔ ان بے خبروں کو یہاں تک معلوم نہیں کہ قتال کی بات کرنی ہے یا جہاد کی! اگر قتال کی بات ہے تو علامہ غلام رسول صاحب سعیدی کا قول برحق ہے کہ اپنی آزادی کے لیے لڑنے والے فریڈم فائٹر ہوتے ہیں، اُنہیں دہشتگرد قرار نہیں دیا جاسکتا۔ لیکن کبھی قتال کی شرائط کا بھی مطالعہ فرمالیں کہ وہ کب شروع کرنا چاہیے، اگر شرائط مکمل ہیں تو پاک فوج اور عمران خان کو آگاہ کریں، آپ نے تو ان شرائط کا مطالعہ کر رکھا ہوگا۔
رہا یہ مسئلہ کہ کیا آج بھارت اس قدر طاقتور ہو چکا ہے کہ وہ اپنی مرضی سے کشمیر میں دندناتا پھرتا ہے تو اس کا جواب یہ ہے کہ پچھلی سات دہائیوں میں اقوامِ عالم کے سامنے اپنا مدعا رکھنے کے لیے آپ کے سفیروں نے کیا کِیا۔ محض اپنے بچے بیرونِ ملک منتقل کر کے انہیں وہاں کا مستقل رہائشی بنایا! ویسے بہت سے اسلام کے نام لیوا مولویوں نے بھی اسی طرح کی حرکتیں کی ہیں اور پاکستان میں امریکہ شمریکہ کے خلاف جہاد کا درس دیا ہے۔ یہ منافقانہ رویے ہیں۔ پاکستان میں، لاہور میں، کراچی میں، ملتان میں اور دیگر تقریباً تمام علاقوں میں ”مسلمان“ کہلوانے والے بڑے بڑے غنڈے اور درندے عوام الناس کی سانسوں تک، پر حکومت کرتے ہیں اور اُن کا خون پی جاتے ہیں۔ مولویوں نے اُن کے خلاف کیا کِیا۔ سیاسی جماعتوں کے ووٹ انہی غنڈوں کے مرہونِ منت ہوتے ہیں، یہ مولوی لوگ اُن کے ساتھ ایک سٹیج پر جا کر بیٹھتے ہیں اور محافلِ میلاد ہوتی ہیں۔ یہ کس غیرت کی بات کررہے ہیں، جب یہاں لاہور میں (میں اُس وقت ڈاکٹر طاہرالقادری کا ناقد تھا، میرے دوست اس کے گواہ ہیں) جامعہ منہاج القرآن پر گورنمنٹ کے ریاستی دہشتگردوں نے حملہ کیا تو اِن مولویوں نے کیا کیا، میں بتاتا ہوں، 17 اگست 2014ء کو ایک پرویز رشید ہوتا تھا، اُس نے فلسطین کا جھنڈا گلے میں ڈالا تو ڈاکٹر اشرف آصف جلالی نے بھی فلسطین کے حق میں احتجاج کیا، کیا ڈاکٹر صاحب کو لاہور میں بنا ہوا غزہ نظر نہیں آرہا تھا (یاد رہے اُس وقت خادم رضوی گروپ علیحدہ نہیں ہوا تھا، وہ اور جلالی صاحب یک زبان ہوتے تھے)۔
اب دیکھتے ہیں کہ آج خادم صاحب کے ماننے والوں کو ”دہشتگرد“ قرار دئیے جانے کا خدشہ کیوں ہے؟ کیونکہ خادم صاحب کوئی ایک دہائی قبل یعنی تقریباً دس سال پہلے امریکی ایجنسیوں کی پروردہ ”حزب التحریر“ کے ہاتھوں میں کھیل چکے ہیں، یہ دُنیا کی سب سے سخت ترین خوارجی جماعت ہے، یہ داعش سے بھی چار قدم آگے کی چیز ہے، لہٰذا میں اپنے تجزیے کی بنیاد پر کہتا ہوں کہ خادم صاحب ایک خوارجی گروہ کے نمائندہ بن چکے ہیں، اب اگر ان کے ماننے والے مسلمانوں ہی کو کافر قرار دے کر قتل کرنا جائز قرار دے دیں تو کچھ حیرت کی بات نہ ہوگی۔16 اگست 2019ء

Wednesday, August 7, 2019

ڈاکٹر کمار وشواس کے اندر سے ادیب مر گیا اور ایک شدت پسند ہندو نکل کر سامنے آگیا

شاعری، موسیقی، افسانے، ناول، مصوری اور دیگر اصنافِ فنونِ لطیفہ ایسی تخلیقات ہیں، جنہیں انسان اپنے مخالف فرقے، مخالف مذہب کے لوگوں، دشمن ممالک کے لوگوں حتیٰ کہ شدید ترین دشمنوں کے فنکاروں کے ہاتھوں جنم لینے کے بعد بھی پسند کر لیتا ہے، اور فنکارانہ صلاحیتیں دیکھ کر سر دُھنتا ہے۔
شاعری اور موسیقی میں ایسا جادُو ہوتا ہے کہ پاکستانی لوگ انڈیا کے اُن گانوں کو بھی سُنتے ہیں جن میں سات جنم کا ذکر ہوتا ہے، جو کہ غیر اسلامی نظریہ ہے۔ اس کے علاوہ بھی کُفریہ گانے، سُریلی آواز اور مدُھر دھن کی وجہ سے کانوں میں رس گھولتے دکھائی دیتے ہیں، لوگ اینٹی پاکستان (پاکستان مخالف) فلمیں بھی دیکھ ہی لیتے ہیں۔
اِن سب کے باوجود وہ اِن کفریہ عقائد کے قائل نہیں ہوتے اور اپنے دین و مذہب کے ساتھ ساتھ اپنے مُلک سے پیار کرتے ہیں۔
گزشتہ چند برسوں میں ہم نے بہت سے بوڑھے سکھوں کے واقعات پڑھے ہیں جو کہتے ہیں کہ وہ 1947ء میں مُسلمانوں پر مظالم ڈھاتے رہے، لیکن اب گزشتہ ساٹھ ستر برسوں سے وہی مظالم اُن کے لیے وبالِ جان بنے ہوئے ہیں، انہیں ایک پل چین نہیں ملتا۔ اور بعض سکھوں کا کہنا ہے کہ 1984ء میں اُنہیں اسی کرتوت کی سزا ملی تو بھارتی درندہ صفت افواج نے ان کے گھروں کے گھر اجاڑ دئیے، جس پر بھارت میں ایک کمال قسم کی فلم ”ماچس 1996“ وجود میں آئی جا کا مشہورِ زمانہ گانا ”چھوڑ آئے ہم وہ گلیاں“ کانوں میں رس گھولتا ہے۔ آج وہ سکھ اپنی بقا کی خاطر پریشان ہیں کہ ہندُتوا کے شدت پسند (جو طالبان اور خادم رضوی سے بھی زیادہ سخت ذہنیت رکھتے ہیں) بھارت کے نہ صرف مسلمانوں، سکھوں، عیسائیوں بلکہ خود اپنے امن پسند ہندؤں کے بھی مخالف ہیں اور اُنہیں بھی مار دیتے ہیں (جیسے یہاں طالبان مساجد میں بم دھماکے کرتے ہیں، اور خادم رضوی کے پیروکار باقی سب مسلمانوں کے غلط کہتے ہیں)۔
یہ ہندو شدت پسند RSS(راشٹریہ سویم سیوک سنگھ) کے کارندے ہیں۔ یہ بھی فناٹِک ہیں اور نہایت منظم ہیں، قیامِ پاکستان کے دور میں بھی انہوں نے ہی آگ لگا رکھی تھی اور نسیم حجازی اپنی کتاب ”خاک اور خون“ میں سچ ہی روتا پیٹا تھا کہ ظالم لوگ ہیں۔
بلاشبہ کمار وشواس کی شاعری کو دنیا بھر میں پسند کیا جاتا ہے اور اُن کی مقبولیت کی وجہ سے پاکستان میں بھی اُن کے پرستار موجود ہیں، حالیہ بھارتی الیکشن میں نریندر مودی کا مُسلم کش اور پاکستان مخالف ایجنڈا تھا، اسی ایجنڈے کی حمایت کرنے کی وجہ سے عام آدمی پارٹی نے اپنے ہی بانی سینئر رُکن ڈاکٹر کمار وشواس کو الیکشن سے ذرا دُور ہی رکھا اور الیکشن کے فوراً بعد پورے انڈیا میں سے میں (عبدالرزاق قادری) نے صرف ایک بندے کا بیان سُننا پسند کیا کہ وہ اب کیا سوچ رکھتا ہے، جبکہ مودی جیسا ظالم درندہ دوسری بار بے انتہا طاقت کے ساتھ برسرِ اقتدار آچکا ہے تو کمار وشواس کیا خیالات ظاہر کرتا ہے، اُس نے ٹی وی انٹرویو میں بھارتیہ جنتا پارٹی کے مودی کی جیت (بلکہ اُس کے نظریے کی جیت) کو خوش آمدید کہا اور اپنی عام آدمی پارٹی کی ہار کا مذاق اُڑایا۔
پرسوں 5 اگست 2019ء سے جس تازہ صورت حال کی طرف بھارت نے پیش قدمی کی ہے، اس کے بعد آج 7 اگست کو ڈاکٹر کا ایک وڈیو ”آج تک ٹی وی“ کے کیمرے سے یوٹیوب پر آیا ہے، جو دیکھتے دیکھتے ہی لاکھوں ناظرین کی توجہ کا مرکز بن چکا ہے۔ اُس میں کمار وشواس اپنے اندر سے ایک سلیم الفطرت انسان کی موت کا اعلان کر رہا ہے، اور کہہ رہا ہے کہ بھارت نے کشمیر میں ”انجیکشن“ لگایا ہے، درد تو ہوگا، لیکن پھر دھیرے دھیرے آرام آ جائے گا۔
مجھے آج یہ کہنے میں کوئی عار نہیں کہ اُس کے اندر سے ایک ادیب مر چکا اور ایک RSS کا نمائندہ شدت پسند کافر نکل کر باہر آگیا ہے۔

Thursday, April 4, 2019

گوگل پلس کے اختتام کے بعد پہلی تحریر

یہ تحریر بلا عنوان اور اس کا کوئی خاص موضوع بھی نہیں ہے۔۔۔۔۔۔
اپریل 2011ء میں میری پہلی تحریر ماہنامہ نوائے منزل لاہور میں چھپی، بعض تحاریر اصلاحی قسم کی تھیں، اور پھر سوشل میڈیا پر، متعدد مذہبی جذبات کی آئینہ دار تھیں، پھر (اُردو) ویکیپیڈیا پر مذہبی شخصیات و تنظیمات پر تعارفی مضامین لکھے، اور دیگر ویب سائٹس پر اپنا سیاسی اُبال نکالا۔
کبھی کبھار صحافت کا خُمار چھا جاتا ہے، لیکن پروفیشنل صحافی نہ ہونے کے باعث کوئی خاص خدمات نہیں ہیں، مُجھے تحریر و تدبر میں زمانے کے اُلٹ جانے کا کچھ خاص خبط نہ ہے، بلکہ جو سچ دکھائی دے کہ دیتا تھا، میں نے اپنی نفسیاتی حساسیت کی بُنیاد پر دُنیا بھر کے اخبارات و جرائد کو فالو کر رکھا تھا، بلکہ آج بھی میرے ٹویٹر اکاؤنٹ میں دیکھا جا سکتا ہے، اس کے علاوہ بھی خبروں کا ایک اکاؤنٹ تھا، وہاں بھی۔
دُنیا بھر کے اخبارات و ٹیلی ویژن ویب سائٹس کی خبریں کھاتا تھا، خبریں پیتا تھا، پھر آہستہ آہستہ صحت کی طرف دھیان گیا، اور اینڈرائیڈ بھی ٹوٹ گیا، اب خبریں کم کم دیکھتا ہوں لیکن ڈیلی ڈان روزانہ آتا ہے، کبھی کبھار اُس کی ہیڈ لائن دیکھ لیتا ہوں، لیکن اکثر صبح کے وقت اُس پر نظر ڈالنے سے گریز کرتا ہوں، مبادا کسی خبر کو سنجیدہ لے کر دماغی مسائل کا شکار ہو جاؤں۔
میں دُنیا بھر کی خبریں پڑھ پڑھ کر ذہنی و جسمانی صحت داؤ پر لگا بیٹھا تھا، بلکہ آج بھی نہایت کمزور ہوں اور موسمی اثرات کی شدت میرے لیے ناقابلِ برداشت معاملہ ہے۔ اللہ تعالیٰ ہمت دے رہا ہے اور میں روبہ صحت ہوں، اس صحت کی بحالی میں بڑا کردار حکیم اعجاز حسین کا ہے جو لاہور میں اپنا رحمت دواخانہ چلاتے ہیں اور حاذق حکیم ہیں۔
عموماً لوگ ذاتی مسائل کی وجہ سے پریشان ہو کر بیماریوں اور نفسیاتی امراض کا شکار ہو جاتے ہیں جبکہ، میری کہانیاں بھی لوگوں سے کم ہی مختلف ہیں بلکہ بعض میں کافی شدت ہے جن کے باعث بہت سے دل و دماغ پر قابو رکھنے والے بھی حوصلہ ہار جاتے ہیں۔ لیکن مُجھے اللہ نے ذاتی مسائل کی پریشانی کی بجائے غمِ دُنیا کی فکر عطا کی ہے۔ میں تقریباً ہمہ وقت انسانیت کی بھلائی اور مصیبت زدہ انسانوں کو ”جانوروں سے بدتر انسانوں“ کے چُنگل سے نکالنے کے لیے غور و فکر کرتا رہا ہوں، وہ چُنگل چاہے، برما کے مجبور و بے کس کشتی سوار مہاجرین کے مسائل کی صورت میں ہو، امریکہ و چین میں میکرو ٹیکنالوجی کے اداروں میں غلاموں سے بدتر زندگی بسر کرنے والوں کا مسئلہ ہو، یا پاکستانی سڑکوں پر دوپہر کی حدت میں ٹوٹے اعضاء والے بھکاریوں کی شکل میں ہوں، وہ کسی بھی مُلک کے ہوں، کسی بھی رنگ و نسل اور مذہب کے ہوں، ایک خبر آئی تھی کہ دُنیا میں سب سے زیادہ (دو کروڑ) غلام بھارت میں ہیں۔
یہ فتنے داعش و طالبان کی صورت میں ہوں جو حضرت یونس علیہ السلام کی مسجد اور حضرت رفاعی کبیر کا مزار تک بموں سے اڑا دیتے ہیں، میرے لیے سُوہانِ رُوح رہے ہیں۔ اور میرا خون کھولتا رہا ہے، بلکہ جلتا رہا ہے، اور دماغ ڈھیروں افکار میں جکڑا رہتا تھا، جس کا علاج کرنے میں حکیم صاحب نے بہت محنت کی۔
میرے دوست مجھے اپنے مسائل سے بھی آگاہ کرتے رہتے ہیں اور میں بھی اُنہیں۔۔۔ بلکہ ٹھہرئیے۔۔ میں ایک خاطر خواہ مقروض بھی ہوں، جو کہ محض میرے دوستوں کا مُجھ پر اعتماد ہے، لیکن گُفت و شنید میں میں ہمیشہ کہیں اٹکا رہا ہوں، اور اپنے تئیں ”اصولی مؤقف“ پر قائم رہتا تھا، دوست احباب بات کو بھول جاتے اور مُسکرا لیتے لیکن، کتابوں کی باتیں میرے ذہن و دماغ کو جکڑے رکھتیں اور میں اپنے سوالات کے جوابات کی تلاش میں سرگرداں رہتا۔
مُجھے معلوم نہیں کہ یہ تحریر کیو ں شروع کی اور کیا لکھا ہے، بہر حال ختم شُد


Friday, January 11, 2019

Progress Report of Rafi and Rija


        Rafi and Rija two siblings joined our institute in February 2018 and started learning 'basic book of Arabic learning' to recognize the Alphabet and then gradually moved to combined letters and then to movements of sounds, and completed their books with their pace respectively.


     Rafi is going to complete his two and half parts (30th and 29th completed and 28th’s half now) on next lesson and Rija will be reaching up-to her last part's half within next two lessons.
We hope that these children will be taught world class Islamic teachings what every Muslim parents want to lead their lives according to guidance of Islam.
Team E-Learning Holy Quran

11-January-2019

Thursday, January 10, 2019

16 Line Tajweedi Quran 4 Color Coded in single pdf file Download Free


Assalamu-Alaikum!
Seven Years of Excellent Services
Al-Hamdulillah!
            Today is the first day in 8th year of our company. So, it's very important day in our history. We are intended to share Four Colors' Coded Quran with you on this happy occasion.

            Hopefully you're fine. Once you demanded the single file of Four Color Quran, on our blog, so I'm going to send you a link to download it. E-Learning Holy Quran is going to humbly present four Colors' coded Holy Quran file (Look-Alike Taj company's 16 lines Quran) for online users to download it free of cost and study the Holy Quran. The File is 229 MBs (MegaBytes) in weight. Link is below.

16 Line Tajweedi Quran 4 Color Coded in single pdf file Download Free

Seven Years of Excellent Services

Al-Hamdulillah!
            Today is the first day in 8th year of our company. So, it's very important day in our history. We are intended to share Four Colors' Coded Quran with you on this happy occasion.
           E-Learning Holy Quran Company was launched in January 2012 and it has completed its seven years today. We are running an online Quran teaching institute since then with great passion and hard-work. Many students (including young kids, teenagers, Adult and old-age) have learnt the Holy Quran during these years, some of them also have memorized the parts of the Holy Quranic. Our students are our assets because they are the guarantee that we have been working properly since 2012 AD. Some parents of the students also have mentioned their views on our Page on Google Maps and on Facebook page.
     If you need any of our services, or some queries i.e. regarding our teaching way, Quran Downloading, Translation of Quran or to download Tajweed Book, so you may contact us via any means which are convenient for you. For example
Email: info@elearningholyquran.com
G-mail:
elearningholyquran@gmail.com
Skype:
elearningholyquran
_
FaceBook: www.facebook.com/ELearningHolyQuran
Mobile Number: +92-345-4809757
     We will love to reply you and provide you our services if needed. You may also comment below this post, or write a review on our Google Maps Address.
Stay Blessed

Four Color Coded Quran

     E-Learning Holy Quran is going to humbly present four Color Holy Quran file (Look-Alike Taj company's 16 lines Quran) for online users to download it free of cost and study the Holy Quran. The File is 229 MBs (MegaBytes) in weight
To download please Click on following link 16 Line Tajweedi Quran 4 Color Coded in single PDF file Download Free 229 MBs